چوہدری سرور کا پنجاب یونیورسٹی میں نوجوان پراسکی اہلیہ کے سامنے تشدد کے واقعے کا نوٹس

0
148

لاہور: گورنر پنجاب چوہدری محمد سرور نے پنجاب یونیورسٹی میں ایک طلبہ تنظیم کے کارکنوں کی جانب ایک نوجوان پر اسکی اہلیہ کے سامنے تشدد کے واقعے کا نوٹس لیا ہے اور اس معاملے کی مکمل رپورٹ جامعہ کے وائس چانسلر سے طلب کی ہے۔

یاد رہے کہ گذشتہ روز پنجاب یونیورسٹی میں ایک نوجوان کو اس وقت تشدد کانشانہ بنایا گیا جب وہ اپنی اہلیہ کے ساتھ جارہا تھا، طلبہ تنظیم کے کارندوں نے اس شاگرد پر لڑکی سے غلط مراسم کا الزام لگا کر تشدد کا نشانہ بنایا جو کہ اسکی اہلیہ تھی۔

واقعے کی ویڈیو سوشل میڈیا پر وائرل ہوئی جس میں یہ دیکھا جاسکتا ہے کہ وہ لڑکی چیخ چیخ کر آوازیں لگاتی رہی کہ یہ میرا شوہر ہے مگر اسکو مسلسل تشدد کا نشانہ بنایا جاتا رہا۔

تشدد زدہ طالبِ علم کی شناخت اویس رند کے نام سے ہوئی ہے جبکہ اسکی اہلیہ پنجاب یونیورسٹی کے شعبہ تاریخ میں ایم فل کی طالبہ ہے۔

یاد رہے کہ گزشتہ چند سالوں میں پنجاب کی متعدد یونیورسٹیوں میں سندھی، بلوچ اور پختون طلبہ پر تشدد کے واقعات کے رجحانات میں اضافہ دیکھنے میں آیا ہے اور انتظامیہ کی طرف سے ایسے اقدامات کی روک تھام کے لئے خاطر خواہ اقدامات دیکھنے میں نہیں آرہے۔

LEAVE A REPLY