نابالغ بچوں کی ویڈیوز پرغیر اخلاقی کمنٹس،یوٹیوب اشتہارات سے محروم

0
74

ویڈیو اسٹریمنگ کی سب سے بڑی ویب سائٹ یوٹیوب نے نابالغ بچوں کی ویڈیوز پر کئے گئےغیر مناسب تبصرے کرنے والے لاکھوں کی تعداد میں اکاؤنٹس کے تبصروں کو ہٹا دیا ہے۔

ایک رپورٹ کے مطابق یوٹیوب کی انتظامیہ نے کہا ہے کہ ہم نے یوٹیوب کے تعین کردہ پالیسی کے برعکس لاکھوں کی تعداد میں کئے گئے تبصروں کو ہٹا دیا ہے جبکہ اس ضمن میں ایک ایسا فلٹر بنایا جا رہا ہے جو آئندہ خود ہی نامناسب تبصرے کو ہٹا دے گا۔

واضح رہے گزشتہ ہفتے یوٹیوب پرقابل اعتراض ویڈیوز کی موجودگی کے انکشاف کے بعد کئی ملٹی نیشنل کمپنیوں نے اپنے اشتہارات یوٹیوب کو دینے کا سلسلہ بند کردیا تھا۔

قابل اعتراض وڈیوزاورمواد کی موجودگی کے انکشاف سے امریکہ اور یورپ سمیت دیگر خطوں میں تہلکہ مچ گیا تھا بلکہ یوٹیوب کوسخت نکتہ چینی کا بھی نشانہ بنایا گیا ۔

بتایا گیا کہ درجنوں ایسی ویڈیوزیو ٹیوب پر موجود ہیں جن میں کم سن اور نوجوان بچوں کو کھیلتے اور مختلف ایکسر سائیز کرتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔

یوٹیوب کی جانب سے گزشتہ دنوں پالیسی کو تبدیل کرنے کے بعد قابل اعتراض، فحش اورکسی کی دل آزاری کا سبب بننے والی ویڈیوز اور مواد کی باقاعدہ روک تھام کی گئی تھی۔

امریکہ اوریورپ سمیت دیگر خطوں میں تہلکہ مچادینے والا انکشاف دراصل ایک ویڈیو بلاگر نے کیا ہے جس کا دعویٰ ہے کہ یوٹیوب اب بھی قابل اعتراض ویڈیوز اور مواد کی تشہیر میں مصروف ہے۔

ویڈیو بلاگر کی جانب سے کیے گئے دعوے کے بعد لوگوں کی بڑی تعداد نے جب یوٹیوب کو تنقید کا نشانہ بنانا شروع کیا تو ملٹی نیشنل کمپنیوں کا یہ مؤقف سامنے آیا کہ انہوں نے اپنے اشتہارات دینے کا سلسلہ بند کردیا ہے۔

ماہرین کے مطابق ملٹی نیشنل کمپنیوں کی جانب سے اشتہارات کی بندش یوٹیوب کو اربوں روپے کا نقصان پہنچائے گی۔

ویڈیو بلاگر میٹ واٹسن نے اپنی ویڈیو رپورٹ میں یوٹیوب پر قابل اعتراض ویڈیوز اور مواد کی تشہیرکا دعویٰ کیا تھا۔

میٹ واٹسن کی تیار کردہ 20 منٹ کی ویڈیو میں کہا گیا تھا کہ یوٹیوب پر موجود کم سن بچوں کی ویڈیوز کو پر نازیبا کمنٹس موجود ہیں۔

میٹ واٹسن نے دعویٰ کیا تھا کہ نابالغ بچیوں کی ویڈیوز پر جو نامناسب کمنٹس موجود ہیں وہ اس بات کے غماز ہیں کہ کمنٹس کرنے والے افراد بچوں کو جنسی تشدد و زیادتی کا نشانہ بنانے کے عادی ہیں۔

LEAVE A REPLY