قائدِ عوام یونیورسٹی میں خلافِ ضابطہ سنڈیکیٹ کا اجلاس بلالیا گیا

0
318

نوابشاہ: عارضی وائس چانسلر قائدِ عوام یونیورسٹی سلیم رضا سموں نے اقرباء پروری کے فروغ کیلئے اور من پسند افراد کو ترقیاں دینے کیلئے یونیورسٹی سنڈیکیٹ کی 8 ویں خصوصی میٹنگ طلب کی ہے۔

ذرائع کے مطابق کچھ عرصہ قبل اسسٹنٹ پروفیسرز کی آسامیوں کیلئے یونیورسٹی انتظامیہ نے اشتہار جاری کیا تھا جس میں مطلوبہ معیار ایچ ای سی کے قوانین کے عین مطابق درج کیا گیا تھا مگر یونیورسٹی میں تعینات کم تعلیمی قابلیت کے حامل بااثر اساتذہ کے دباؤ میں آکر ان شرائط میں نرمی کیلئے سنڈیکیٹ طلب کرلی۔

عارضی وائس چانسلر سلیم رضا سموں نے اس ضمن میں نوٹیفکیشن بھی جاری کردیا ہے۔

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

ہائیر ایجوکیشن کمیشن کے قوانین کے مطابق کوئی بھی عارضی وائس چانسلر کسی بھی قسم کے بڑے فیصلے لینے کا متحمل نہیں اور نہ ہی سنڈیکیٹ ایچ ای سی کے بنائے گئے کسی قوانین میں نرمی کرسکتی ہے۔

مزید پڑھیے: قائدِعوام یونیورسٹی کرپشن اسکینڈل: دو سابق وائس چانسلروں اور دیگر کیخلاف تحقیقات آخری مراحل میں داخل

مگر صرف مٹھی بھر بااثر اساتذہ کو خوش کرنے کیلئے سندھ کے پڑھے لکھے پی ایچ ڈی نوجوانوں کو پسِ پشت ڈال کر قوانین میں نرمی کرنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

قومی احتساب بیورو (نیب) کی جانب سے بھی تمام جامعات کو تنبیہہ کی گئی ہے کہ کوئی بھی بھرتی ایچ ای سی کے تفویض کردہ معیار کے مطابق عمل میں لائی جائے۔

واضح رہے کہ یونیورسٹی میں عارضی وائس چانسلر کے اختیارات سے تجاوز اور خلافِ ضابطہ اقدامات پر احتجاجی تحریکوں کا سلسلہ بھی کافی عرصے سے جاری ہے اور سندھ کے ایک اہم ضلع میں ایک لمبے عرصے سے ایک عارضی وائس چانسلر تعینات ہے جنکو ہٹا کر ایک مستقل وائس چانسلر تاحال تعینات نہیں کیا جاسکا۔

LEAVE A REPLY