کراچی ،ڈاکٹر کی مبینہ غفلت کے باعث 22سالہ لڑکی عصمت جاں بحق

0
308

کراچی: سندھ گورنمنٹ کورنگی اسپتال میں ڈاکٹر کی مبینہ غفلت کے باعث 22سالہ لڑکی عصمت جاں بحق ہوگئی۔

تفصیلات کے مطابق  سندھ گورنمنٹ کورنگی اسپتال میں ڈاکٹر کی مبینہ غفلت کے باعث 22سالہ لڑکی ہلاکت پر لواحقین نے اسپتال میں شدید احتجاج کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ وہ پوسٹ مارٹم کرانا چاہتے ہیں لیکن ڈاکٹر نے انھیں روک دیا ہے۔

انھوں نے مطالبہ کیا کہ انجکشن لگانے اور مو ت کی وجہ بتائی جائے اور ہمیں انصاف فراہم کیا جائے ۔ پولیس نے اسپتال کے نرسنگ اسٹاف شاہنواز سمیت دو افراد کو تفتیش کے لیے حراست میں لے لیا۔

غلط انجکشن کا شکار ہونے والی بچی نشوا کی حالت غیرتسلی بخش قرار

متوفیہ کی خالہ ریحانہ اور خالہ زاد بھائی عبد الرزاق نے بتایا کہ 22سالہ عصمت ابراہیم حیدری کی رہائشی تھی اور انڈس اسپتال کے ٹی بی پروگرام کی میں چھ مہینے سندھ گورنمنٹ کورنگی اسپتال میں ملازمت بھی کر چکی ہے جمعرات کی صبح دانتوں میں تکلیف کا علاج کے لیے اسپتال آئی، ڈاکٹر نے معائنے کے بعد انجکشن تجویز کیا۔

 لواحقین نے الزام عائد کیا کہ عصمت کوجیسے ہی انجکشن لگایا کچھ ہی دیر بعدوہ انتقال کرگئی ، ہم نے پوسٹ مارٹم کرانا چاہا لیکن ڈاکٹروں نے یہ کہہ کر روک دیا کی اعضاء کی بے حرمتی ہوگی، ہم عصمت کی موت کی وجہ جاننا چاہتے ہیں، واقعے کی انکوائری ہونی چاہیے ۔

یار رہے کہ گزشتہ دنوں میں ڈاکٹرز کی غفلت سے 14 اپریل کو کراچی کے نجی اسپتال دارالصت میں نشوا نامی بچی کو پیٹ درد کی شکایت پر اسپتال لایا گیا تھا جہاں میل نرس کی جانب سے دوائی کی زیادہ مقدار دینے سے بچی کی حالت بگڑ گئی تھی۔

LEAVE A REPLY