منشیات برآمدگی کیس: رانا ثناءاللہ کی درخواستِ ضمانت مسترد

0
40

لاہور: منشیات برآمدگی کیس میں انسدادِ منشیات کی عدالت نے پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنما رانا ثناء اللہ کی درخواست ضمانت مسترد کردی جبکہ دیگر پانچ ملزمان کی ضمانت منظور کرلی۔

تفصیلات کے مطابق رانا ثناءاللہ کے خلاف منشیات برآمدگی کیس کی سماعت انسدادِ منشیات عدالت کے ڈیوٹی جج خالد بشیر نے کی۔

رانا ثناءاللہ کے وکیل نے عدالت کو بتایا کہ انکے موکل کیخلاف ایف آئی آر تین گھنٹے تاخیر کے ساتھ داخل کی گئی جبکہ تھانے کا فاصلہ اس جگہ سے صرف 20 منٹ کے فاصلے پر ہے جہاں سے انہیں اور انکے دیگر ساتھیوں کو گرفتار کیا گیا۔

وکیلِ صفائی نے عدالت کو بتایا کہ رانا ثناءاللہ کی گاڑی بلٹ پروف تھی اور اس گاڑی کو باہر سے کھولا نہیں جاسکتا اور ان کے خلاف داخل کیا گیا کیس محض سیاسی انتقام کا حربہ ہے انہوں نے گرفتاری سے قبل ہی خدشہ ظاہر کردیا تھا کہ انہیں کسی کیس میں گرفتار کیا جاسکتا ہے۔

دوسری جانب اے این ایف کے وکیل رانا کاشف نے عدالت کے سامنے وکیلِ صفائی کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ ایف آئی آر تاخیر سے درج کرنے کا الزام سراسر بے بنیاد ہے اور کیس میں تمام قانونی تقاضے پورے کیے گئے۔

انکا مزید کہنا تھا کہ رانا ثناء اللہ سے ادار کی کوئی زاتی دشمنی نہیں جب انکی گاڑی سے منشیات برآمد ہوئی تب انکے گارڈز نے مزاحمت کی۔

عدالت نے دونوں فریقین کے ریمارکس سننے کے بعد رانا ثناءاللہ کی درخواست ِ ضمانت مسترد جبکہ دیگر پانچ شریک ملزمان کی درخواست منظور کرلی۔

LEAVE A REPLY